زمرہ جات: تزکرہ قلندر بابا اولیاءؒ

رنگ

خدا نما جہاں نما ہے سلسلہ عظیمیہ
قبول شاہ دوجہاںؐ ہے سلسلہ عظیمیہ
حسین رہنماملے حسن عظیم برخیاؔ
قلندروں کا رنگ ہے سلسلہ عظیمیہ
کفر و الحاد کی آندھیاں جب اپنے عروج پر ہوتی ہیں اور ہر طرف گھپ اندھیرے کے سوا کچھ نظر نہیں آتا تو اللہ تعالیٰ اپنی صفت رحمت سے اپنی مخلوق کا اضطراب اور بے چینی دور کرنے کے لئے پیغمبر مبعوث فرماتے ہیں ۔ پیغمبر بتاتے ہیں کہ انسان کی سب سے بڑی ضرورت ہدایت ربانی ہے۔ وہ توفیق ہے جو انسان کو بتاتی ہے کہ کائنات کیسے وجود میں آئی۔ اس کی تخلیق میں کون سے فارمولے کام کررہے ہیں ۔ آدم کو خالق کائنات نے جس لئے پیدا کیا ہے۔ اس دنیا میں آنے سے پہلے وہ کہاں تھا اور دنیا کی چند روزہ زندگی گزار کر کہاں چلا جاتا ہے۔ چاند ، سورج اور کائنات کی تخلیق کس طرح ظہور پذیر ہوئی اور کہکشانی نظاموں کی سیر کے کیا طریقے ہیں۔
حضرت آدم ؑ سے حضرت عیسی ؑ تک شعور انسانی نے ارتقاء کا وہ مرحلہ طے کرلیا تھا جس میں وہ اخلاق، تمدن ، معیشت اور سیاست کی گتھیوں کو سلجھانے کی اہمیت کو محسوس کرچکا تھا۔ مخلوق کی ذہنی افتاد جب ارتقائی مراحل سے ذرا آگے قدم بڑھانے کی طرف مائل ہوئی تو اللہ تعالیٰ نے ختم المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم کو مبعوث فرمایا۔ آپ ؐ نے نوع انسانی کو اپنی حیات طیبہ کی روشن مثال کے ساتھ معاشرتی ، اخلاقی ، تاریخی اور تسخیری فارمولوں کی مستند کتاب قرآن سےاستفادہ کرنے کی واضح ہدایات دیں اور بتایا کہ یہ کتاب بھٹکی ہوئی انسانیت کو صراط مستقیم پر گامزن کرتی ہے اور عزت و شرف کے اعلیٰ مقام پر فائز کرتی ہے۔ سیّدناحضورعلیہ الصّلوٰۃوالسّلام کا ارشاد گرامی ہے:
’’ اللہ تعالیٰ نے مجھے اس مشن پر بھیجا ہے کہ میں انسانوں کے درمیان عدل واحسان سے باہمی تعلقات قائم کردوں، تمام بتوں کو توڑ دوں اور صرف ایک اللہ کی اطاعت و بندگی کا مرکز و محور بنادوں، یہاں تک کہ کسی حیثیت سے کسی معاملہ میں کوئی اللہ کا شریک نہ رہے گا۔‘‘
ہر انسان دوسرے انسان سے ہم رشتہ ہے ۔ ہر انسان دوسرے انسان سے اس لئے متعارف ہے کہ اس کے اندر زندگی بننے والی لہریں ایک دوسرے میں رد وبدل ہورہی ہیں۔ پر مسرت محفل میں جہاں سینکڑوں ہزاروں افراد آلام سے بے نیاز ، خوشیوں کے لطیف جذبات سے سرشار ہیں وہاں ایک فرد کی المناکی ساری محفل کو مغموم کردیتی ہے۔ ۔۔۔۔۔آخر ایسا کیوں ہے؟
اس لئے کہ پوری نوع کے افراد زنجیر کی کڑیوں کی طرح ایک دوسرے کے ساتھ وابستہ و پیوستہ ہیں ۔ ایک کڑی کمزور ہوجائے تو ساری زنجیر کمزور ہوجاتی ہے۔ ایک کڑی ٹوٹ جائے تو زنجیر میں جب تک دوسری کڑی ہم رشتہ نہ ہوجائے زنجیر نہ کہلائے گی۔ قرآن کریم کا ارشاد ہے:
وَاعْتَصِمُوْ ابَحَبْلِ اللہ جَمِیْعاً وَلاَ تَفَرَّ قُوْا (آل عمران)
سب مل کر اللہ کی رسّی کو مضبوط پکڑ لو اورتفرقہ میں نہ پڑو۔
اتحاد ویگانگت ماضی کو پروقار، حال کو مسرور اور مستقبل کو روشن و تابناک بناتی ہے۔
اللہ کی سنت میں نہ تبدیلی ہوتی ہے اور نہ تعطل واقع ہوتا ہے ۔ اس قانون کے مطابق جب اللہ کے رسول ؐ نے ہماری ظاہری آنکھ سے پردہ فرمالیا تو سنت کو جاری وساری رکھنے کے لئے اللہ نے اپنے رسول ؐ کے ورثا کاایک سلسلہ قائم کردیا۔ سلسلہ کیا ہے؟ ان اولیاء اللہ کا گروہ ہے جن کے بارے میں قرآن مجید فرقان حمید میں ارشاد ربانی ہے:
الاَ اِنَّ اَوْلِیَآءَ اللہ لاَ خَوْفُ‘ عَلَیْھِمْ وَلَا ھُمْ یَحْزَنُوْن ط
اللہ کے دوستوں کو خوف ہوتا ہے اور نہ وہ غم آشنازندگی سے مانوس ہوتے ہیں ۔(یونس۔آیت ۶۲)
علم حضوری سے مالا مال اولیاء اللہ نے خاتم المرسلین صلی اللہ علیہ وسلم کے مشن کی پیش رفت کے لئے ہدایت و رہنمائی کی ذمہ داری اپنے توانا کاندھوں پر اٹھالی۔ آج یہ جو توحید کا غلغلہ اور علم حضوری کی جھلک نظر آتی ہے یہ سب حضور اکرم ؐ کے ان ہی ورثا کی کوشش کا ثمر ہے۔
حضور قلندر بابااولیاء ؒ فرماتے ہیں :
’’حضورعلیہ الصّلوٰۃوالسّلام اللہ کے ایسے محبوب بندے ہیں کہ جتنی قربت اللہ نے انہیں عطا کی ہے کسی اور کو نصیب نہیں ہوئی۔ جس قوم یا جس فرد پر حضور ؐ کے اعلیٰ اوصاف اور روحانی اقدار کی چھاپ نہ ہو، اس کا یہ کہنا کہ میں حضورؐ کا امتی ہوں حضور ؐ کے ساتھ بے ادبی اور گستاخی ہے۔‘‘
جو خودعارف نہیں وہ کسی کو عارف کیسے بنا سکتا ہے! جو خود قلاش اور مفلوک الحال ہے وہ کسی کو کیا خیرات دے گا!
اس پاکیزہ کردار عارف حق نے ہمیں بتایا ہے کہ آج ہم کفر و شرک کے طوفان سے اگر بچے ہوئے ہیں تو اس کی وجہ وہ آواز ہے جو پیدا ہوتے ہی ہم اپنےبچوں کی حق آشنا سماعت میں منتقل کردیتے ہیں ۔ اذان کے معنی اور مفہوم پر تفکر کرنے سے یہ بات مشاہدہ میں آجاتی ہے کہ پیدا ہونے والے ہر بچے کے دماغ کی اسکرین (SCREEN) پر پہلا نقش یہ مرتسم ہوتا ہے کہ ہمارا پیدا کرنے والا اللہ ہے۔وہ اللہ جو ہمیں زندہ رکھتا ہے اور ہمارے لئے زندگی کے وسائل فراہم کرتا ہے۔
اللہ والوں کے اوپر رحمتوں کا نزول ہوتا ہے، تجلیات کی بارش ہوتی ہے، ان کے فیوض وبرکات کی روشن اور منور چادر ایک عالم پر سایہ فگن رہتی ہے۔
ہر زمانے میں طالب حق کسی عارف بزرگ سے بیعت ہونے کے بعد جب وہ سلوک کی منزلیں طے کرتا ہے تو وہ بزرگ کسی نہ کسی راستے سے قدم بہ قدم چلا کر منزل مقصود یعنی عرفان خداوندی تک پہنچا دیتا ہے۔ یہ اصول و قوانین اور روحانی راستے سلسلے کا تعین کرتے ہیں ۔ گروہ اولیاء اللہ میں سے منتخب اور اکابر لوگوں نے ہر زمانے میں طالبان حق کی عمومی حالت کو پیش نظر رکھ کر ایسے اذکارواسباق مرتب کئے ہیں جن پر عمل پیرا ہو کر عرفان خداوندی حاصل کرسکیں۔ہر زمانے میں نوع انسانی کی شعوری اور جسمانی صلاحیتوں میں فرق بھی واقع رہا ہے۔ ایک زمانہ میں لوگوں کے پاس جسمانی قوت کی فراوانی تھی لیکن ان کے شعور کی قوتیں اتنی مضبوط نہیں تھیں جتنی کہ آج دیکھنے میں آرہی ہیں۔ فی زمانہ ماحول کے اثرات سے لوگوں کے اعصاب کمزور ہوگئے ہیں ۔ ان کی مصروفیات میں حد درجہ اضافہ ہوگیا ہے۔ چنانچہ آج لوگوں کے لئے یہ ممکن نہیں رہا کہ وہ پرانے طریقہ ہائے ریاضت پر عمل کرسکیں۔
آج کے سائنسی دور میں کوئی بات اس وقت قابل قبول ہے جب اسے فطرت کے مطابق اور سائنسی توجیہات کے ساتھ پیش کیاجائے۔ سلسلہ عالیہ عظیمیہ کا مشن بھی یہی ہے کہ لوگوں کے اوپر تفکر کے دروازے کھول د یئے جائیں ۔ چنانچہ حالات حاضرہ کے پیش نظر سلسلہ عالیہ عظیمیہ کے اسباق و اذ کار بہت ہی مختصر مرتب کئے گئے ہیں جن کے ذریعے رہروان سلوک کو عرفان خداوندی نصیب ہوتا ہے۔

مصنف : خواجہ شمس الدین عظیمی

⁠⁠⁠حوالۂِ کتاب یا رسالہ : تذکرہ قلندر بابا اولیاءؒ

یہ مضمون چھپی ہوئی کتاب یا رسالہ میں صفحہ نمبر 162 سے 167تک ہے۔

اس سلسلے کے تمام مضامین :

تذکرہ قلندر بابا اولیاءؒ
    ِ انتساب ، ِ 1 – پیش رس ، ِ 2 – حالات زندگی ، ِ 3 – قلندر ، ِ 4 – قلندری سلسلہ ، ِ 5 – تعارف ، ِ 6 – جائے پیدائش ، ِ 7 – تعلیم و تربیت ، ِ 8 – روحانی تربیت ، ِ 9 – درونِ خانہ ، ِ 10 – روزگار ، ِ 11 – بیعت ، ِ 12 – مقام ولایت ، ِ 13 – اخلاق حسنہ ، ِ 14 – بچپن اور شباب ، ِ 15 – اوصاف حمیدہ ، ِ 16 – عظمت ، ِ 17 – صلبی اولاد ، ِ 18 – تصنیفات ، ِ 19 – کشف وکرامات ، ِ 20 – کبوتر زندہ ہوگیا ، ِ 21 – گونگی بہری لڑکی ، ِ 22 – موسلادھار بارش ، ِ 23 – میں نے ٹوکری اٹھائی ، ِ 24 – مہر کی رقم ، ِ 25 – فرشتے ، ِ 26 – مشک کی خوشبو ، ِ 27 – ایثار و محبت ، ِ 28 – چولستان کا جنگل ، ِ 29 – ہر شئے میں اللہ نظر آتا ہے ، ِ 30 – زمین پر بٹھادو ، ِ 31 – جِن مرد اور جِن عورتیں ، ِ 32 – پیش گوئی ، ِ 33 – درخت بھی باتیں کرتے ہیں ، ِ 34 – لعل شہباز قلندر ؒ ، ِ 35 – صاحب خدمت بزرگ ، ِ 36 – فرشتے حفاظت کرتے ہیں ، ِ 37 – سٹّہ کا نمبر ، ِ 38 – بیوی بچوں کی نگہداشت ، ِ 39 – نیلم کی انگوٹھی ، ِ 40 – قلندر کی نماز ، ِ 41 – وراثتِ علم لدنّی ، ِ 42 – مستقبل کا انکشاف ، ِ 43 – اولیاء اللہ کے پچیس جسم ہوتے ہیں ، ِ 44 – فرائڈ اور لی بی ڈو ، ِ 45 – جسم مثالی یا AURA ، ِ 46 – آپریشن سے نجات ، ِ 47 – کراچی سے تھائی لینڈ میں علاج ، ِ 48 – ایک لاکھ روپے خرچ ہوگئے ، ِ 49 – پولیو کا علاج ، ِ 50 – ٹوپی غائب اور جنات حاضر ، ِ 51 – زخم کا نشان ، ِ 52 – بارش کا قطرہ موتی بن گیا ، ِ 53 – جاپان کی سند ، ِ 54 – اٹھارہ سال کے بعد ، ِ 55 – خون ہی خون ، ِ 56 – خواجہ غریب نواز ؒ اور حضرت بوعلی شاہ قلندر ؒ ، ِ 57 – شاہ عبدالطیف بھٹائیؒ ، ِ 58 – میٹھا پانی کڑوا ہوگیا ، ِ 59 – پیٹ میں رسولی کا روحانی علاج ، ِ 60 – خرقِ عادت یا کرامت ، ِ 61 – ارشادات ، ِ 62 – انسان کا شعوری تجربہ ، ِ 63 – زمان ماضی ہے ، ِ 64 – ماضی اور مستقبل ، ِ 65 – حواس کیا ہیں ؟ ، ِ 66 – اپنا عرفان ، ِ 67 – اسرارِ الٰہی کا بحر ذخّار ، ِ 68 – دربار رسالت ؐ میں حاضری ، ِ 67 – کُن فیَکون ، ِ 68 – مکتوبِ گرامی ، ِ 69 – ہزاروں سال پہلے کا دور ، ِ 70 – سورج مرکز ہے، زمین مرکز نہیں ، ِ 71 – فرائڈ کا نظریہ ، ِ 72 – علم مابعد النفسیات ، ِ 73 – مابعد النفسیات اور نفسیات ، ِ 74 – تصنیفات ، ِ 75 – رباعیات ، ِ محرم نہیں راز کا وگر نہ کہتا ، ِ اک لفظ تھا ، اک لفظ سے افسانہ ہوا ، ِ معلوم نہیں کہاں سے آنا ہے مرا ، ِ مٹی میں ہے دفن آدمی مٹی کا ، ِ نہروں کو مئے ناب کی ویراں چھوڑا ، ِ اک جُرعہ مئے ناب ہے ہر دم میرا ، ِ جس وقت کہ تن جاں سے جدا ٹھیر یگا ، ِ اک آن کی دنیا ہے فریبی دنیا ، ِ دنیائے طلسمات ہے ساری دنیا ، ِ اک جُرعہ مئے ناب ہے کیا پائے گا ، ِ تاچند کلیساو کنشت و محراب ، ِ ماتھے پہ عیاں تھی روشنی کی محراب ، ِ جو شاہ کئی ملک سے لیتے تھے خراج ، ِ کل عمر گزر گئی زمیں پر ناشاد ، ِ ہرذرّہ ہے ایک خاص نمو کا پابند ، ِ آدم کو بنایا ہے لکیروں میں بند ، ِ ساقی ترے میکدے میں اتنی بیداد ، ِ اس بات پر سب غور کریں گے شاید ، ِ یہ بات مگر بھول گیا ہے ساغر ، ِ اچھی ہے بری ہے دہر فریاد نہ کر ، ِ ساقی ! ترا مخمور پئے گا سوبار ، ِ کل روز ازل یہی تھی میری تقدیر ، ِ ساقی ترے قدموں میں گزرنی ہے عمر ، ِ آدم کا کوئی نقش نہیں ہے بے کار ، ِ حق یہ ہے کہ بیخودی خودی سے بہتر ، ِ جبتک کہ ہے چاندنی میں ٹھنڈک کی لکیر ، ِ پتھر کا زمانہ بھی ہے پتھر میں اسیر ، ِ مٹی سے نکلتے ہیں پرندے اڑ کر ، ِ معلوم ہے تجھ کو زند گانی کا راز ؟ ، ِ مٹی کی لکیریں ہیں جو لیتی ہیں سانس ، ِ ہر چیز خیالات کی ہے پیمائش ، ِ ساقی کا کرم ہے میں کہاں کامئے نوش ، ِ 76 – وصال ، ِ 77 – خانقاہ عظیمیہ ، ِ 78 – عرس مبارک ، ِ 79 – سلسلۂ عظیمیہ کاتعارف اوراعزاض و مقاصد ، ِ 80 – رنگ ، ِ 81 – سنگ بنیاد ، ِ 82 – خانواَدۂ سلاسل ، ِ 83 – رنگ ، ِ 84 – اغراض و مقاصد ، ِ 85 – قواعد و ضوابط